Happy Holidays

QuestionsCategory: GeneralHappy Holidays
Anonymous asked 1 month ago

iA you are doing well. If I said Happy Holidays to people at my work meaning it in a general sense during this holiday time did I commit kufr ? Should I repeat my nikah and Hajj? I was under the impression that just saying happy holidays was ok.  JazaakAllah.

1 Answers
Mufti Wahaaj Staff answered 1 month ago

بسم الله الرحمٰن الرحيم

الجواب حامداً ومصلياً

As-salāmu ʿalaykum wa-raḥmatullāhi wa-barakātuh.

Saying Happy Holidays in a general sense is not kufr.[1] There is no need to repeat your nikāḥ and Ḥajj.

Note 1: Merely saying “Happy Holidays” is permissible. It is an extension of a general courtesy without any real religious connotation, as opposed to saying,  for example, “Merry Christmas.”

Note 2: A Muslim should also try to go one step further. In all situations, the goal should be to give daʿwah and call others to Islām. During the holiday season, a Muslim should try to tactfully mention the respect that Muslims have for ʿĪsā عليه السلام along with our beliefs about him. Similarly, one should try to mention Rasūlullāh ﷺ, our beliefs about him, and his status vis a vis ʿĪsā  عليه السلام – that ʿĪsā  عليه السلام was sent to give the glad tidings of the coming of Rasūlullāh ﷺ, and that his ﷺ’s teachings are the continuation and completion of the teachings of  ʿĪsā  عليه السلام.

والله تعالى أعلم وعلمه أتم وبه التوفيق
And Allāh Taʿālā Knows Best

Muftī Mohammed Wahaajuddin bin Salauddin
(May Allāh forgive him and his parents)

 

[1]

مرغوب الفقه، غیر مسلم کو ان کے تہوار میں مبارک بادی دینا، ج١٢ ص٥١-٥٣، زمزم

فی زماننا یہ الفاظ عید مبارک کی طرح استعمال ہوتیے ہیں اور آپس میں کرسمس کے موقع پر بطور مبارکبادی کے کہے جاتے ہیں؛ باقی اس کے دوسرے معنی متروک ہو چکے ہیں۔ اکشر لوگ جانتے بھی نہیں جیسے جنوری فروری اپنی اصل کے اعتبار سے اصنام وبتوں کے نام ہیں، لیکن مہنوں کے نام کے طور پر مستعمل ہیں، اور یہ کفریہ معنی بالکل متروک ہیں۔ بنا بریں دوستی رکھنے کے لئی تو درست ہے، البتہ دن کی تعظیم میں ایسے الفاظ کونا درست نہیں۔ ہاں بعض حضرات  یہ کہتے ہیں کہ: ابھی تک ان الفاظ سے صلیب کی طرف ذہن منتقل ہوتا ہے، اس وجہ سے حتی الامکان ایسے الفاظ نہیں کہنے چائے۔

قال في الأشباه والنظائر: واعلم أن اعتبار العادة والعرف يرجع إليه في الفقه في مسائل كثيرة حتى جعلوا ذلك أصلا، فقالوا في الأصول في باب ما تترك به الحقيقة: تترك الحقيقة بدلالة الاستعمال والعادة… والمراد من الاستعمال نقل اللفظ عن موضوعه الأصلي إلى معناه المجازي شرعا، وغلبة استعماله فيه، ومن العادة نقله إلى معناه المجازي عرفا (الأشباه والنظائر، ج١ ص٢٦٨، ادارة القرآن)

بغداد کی وجہ تسمیہ میں لکھا ہے کہ: بغ بت کا نام تھا، جس کی وہ پہجا کرتے تھے اور داد فارسی میں عطیہ کو کہتے ہیں، یعنی بت کا عطیہ، لیکن یہ معنی متروک ہو چکے ہیں، اس لئے اس کا استعمال جائز ہے۔ تاریخ بغداد میں ہے:

بغداد وكان لهم صنم يعبدونه بالمشرق يقال له البغ فقال: بغ، داد (أعطاني الصنم)، والفقهاء يكرهون هذا الإسم من أجل هذا، وسماها أبو جعفر مدينة السلام، لأن دجلة يقال لها وادي السلام (تاريخ بغداد ج١ ص٥٨)

مسئلہ: غیر مسلم کو ان کے تہوار میں مبارک باد دینا جائز ہے۔ اسلامک فقہ اکیڈمی کے اجلاس میں اس موضوع پر تفصیلی مقالات پڑھے گئے، جس کا خلاصہ اور ما حصل کتابی شکل میں منذر عام پر آچکا ہے۔